پاکستان

پی ٹی آئی حکومت نے 100 روزہ کارکردگی عوام کے سامنے رکھ دی

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی اور وزیراعظم کے معاون خصوصی ارباب شہزاد نے پی ٹی آئی حکومت کی 100 روزہ کارکردگی عوام کے سامنے پیش کردی۔

کنونشن سینٹر اسلام آباد میں حکومت کی 100 روزہ کارکردگی کے حوالے سے ہونے والی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ گزشتہ 5 سال میں ساڑھے 4 سال پاکستان کا مقدمہ پیش کرنے کیلئے وکیل ہی نہ تھا اور حکومت ملی تو ہمیں تنہائی میں ڈالنے کی سازش کی گئی۔

انہوں نے کہا کہ مجھے عالمی برادری میں پاکستان کی وکالت کی ذمہ داری تفویض کی گئی، دفتر خارجہ کو پہلے سے زیادہ متحرک کریں گے اور ازسرنو خارجہ پالیسی کی ترجیحات کو مرتب کریں گے جس کیلئے سابق سفارتکاروں اور ماہرین سے مشاورت بھی کریں گے۔

ان کا کہنا ہے کہ دن 100 ہیں اور دو طرفہ انگیج منٹس کی تعداد 73 ہوگئی ہے، ہم نے پہلا فوکس افغانستان پر کیا اور فیصلہ کیا کہ پہلا دورہ افغانستا ن کا ہوگا، افغانستان کو پاکستان کی کسی پالیسی پر اعتراض ہے تو اب بات کرنے کیلئے ایک میکنزم موجود ہے۔

وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ دوسرے ہمسائے بھارت سے اتار چڑھاؤ کسی سے ڈھکا چھپا نہیں، خطے میں امن ہماری ضرورت ہے اور امن ہماری ضرورت اس لیے بھی ہے کہ خوشحالی کے لیے سرمایہ کاری لانی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اگر امن چاہیے تو بھارت، افغانستان اور دیگر ہمسایوں کے ساتھ بہترین تعلقات رکھنے ہوں گے، بہت سے لوگ چاہتے ہیں کہ پاکستان اور ایران کے تعلقات میں دراڑیں پیدا ہوں۔

ان کا کہنا ہے کہ بہت سی آوازیں اٹھیں کہ سی پیک پر عمران کی حکومت کا زاویہ بدل گيا، تشویش کو ابھارا گیا لیکن آج ہم سی پیک کے اگلے مرحلے میں جانے میں کامیاب ہوگئے ہیں، سی پیک کا فوکس انفرا اسٹرکچر سے انسانوں کی طرف موڑ دیا ہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی شہزاد ارباب کا خطاب

وزیراعظم عمران خان کے معاون خصوصی شہزاد ارباب کا کہنا تھا کہ 36 میں سے یہ 18 اہداف حکومت نے 100 دن میں حاصل کیے ہیں۔

انہوں نے کہا پانی کے تحفظ اور خوارک کے تحفظ کے لیے بنیادی کردار ادا کریں گے، دیامر بھاشا اور مہمند ڈیم کو ہنگامی بنیادوں پر تعمیر کیا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ سوشل پروٹیکشن پروگرام وزیراعظم کے دل کے بہت قریب ہے، یہ پروگرام حکومت کے فلیگ شپ پروگرام میں سے ایک ہو گا اور اس پروگرام سے دو کروڑ افراد کو غربت سے نجات ملے گی۔

بلین ٹری سونامی کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے شہزاد ارباب کا کہنا تھا کہ 10 بلین ٹری سونامی، دیگر ممالک میں سب سے بھرپور شجرکاری مہم ہے، اس مہم کے ذریعے پانچ سال میں ملک بھر میں 10 بلین درخت اگائے جائیں گے۔

جنوبی پنجاب صوبے کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیراعظم کے معاون خصوصی کا کہنا تھا کہ جنوبی پنجاب کا تحریک انصاف نے نہ صرف وعدہ بلکہ عزم بھی کر رکھا ہے۔

انہوں نے کہا کہ 30 جون 2019 سے پہلے جنوبی پنجاب کے لیے الگ سیکریٹریٹ بنا دیا جائےگا۔

شہزاد ارباب نے مزید بتایا کہ جنوبی پنجاب کے لیے الگ ایڈیشنل سیکریٹری اور ایڈیشنل آئی جی تعینات ہوں گے اور جنوبی پنجاب کے لیے الگ سالانہ ترقیاتی پروگرام ہو گا۔

انہوں نے بتایا کہ فاٹا کا مرحلہ وار انضمام ابھی جاری ہے، فاٹا میں بلدیاتی انتخابات کو حتمی شکل دے رہے ہیں جب کہ قبائلی اضلاغ میں تیز رفتار ترقی کے لیے پروگرام پر آئندہ دو ماہ میں کام شروع ہوجائے گا۔

شہزاد ارباب کا کہنا تھا کہ بلوچستان کو پاکستان کی ریڑھ کی ہڈی سمجتھے ہیں اور بلوچستان کے عوام کی اجنبیت کا احساس ختم کرنے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان کی قیادت سے بامقصد اور نتیجہ خیز مذاکرات کیے جا رہے ہیں۔

Show More

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Close